English-Video.net comment policy

The comment field is common to all languages

Let's write in your language and use "Google Translate" together

Please refer to informative community guidelines on TED.com

TEDGlobal 2011

Ian Ritchie: The day I turned down Tim Berners-Lee

ایان Ritchie : جس دن میں ٹھکرا دیا ٹم برنرز - لی

Filmed
Views 579,965

1990 کے اواخر کا تصور کریں، اور آپ نے ایک اچھے نوجوان ٹم برنرز- لی نامی شخص سے ملاقات کی ہے، جو آپ سے اپنے مجوزہ نظام جسے ورلڈ وائڈ ویب کہا جاتا ہے کے بارے میں کہہ رہا ہے. Ian Ritchie وہاں تھا. اور... اس نے اسے نہیں خریدا تھا. غلطیوں سے معلومات، رابطہ ، اور سیکھنے کے بارے میں ایک مختصر کہانی.

- Software entrepreneur
Ian Ritchie Full bio

Well we all know the World Wide Web
ویسے ہم سب کو ورلڈ وائڈ ویب کا پتہ ہے کہ
00:15
has absolutely transformed publishing, broadcasting,
اس نے بالکل تبدیل کردیا ہے.. اشاعت، براڈ کاسٹننگ،
00:17
commerce and social connectivity,
تجارت اور سماجی رابطے،
00:21
but where did it all come from?
لیکن یہ سب کہاں سے آیا؟
00:23
And I'll quote three people:
اور میں تین افراد کا ذکر کروں گا :
00:25
Vannevar Bush, Doug Engelbart and Tim Berners-Lee.
وانیور بش، ڈوگ اینگل بارٹ، ٹم برنرز- لی.
00:27
So let's just run through these guys.
تو صرف ان لوگوں کا ذکرکرتے ہیں.
00:30
This is Vannevar Bush.
یہ وانیور بش ہے.
00:32
Vannevar Bush was the U.S. government's chief scientific adviser during the war.
وانیور بش جنگ کے دوران امریکی حکومت کا چیف سائنسی مشیر تھا.
00:34
And in 1945,
اور 1945 میں،
00:37
he published an article in a magazine called Atlantic Monthly.
اس نے ماہانہ اٹلانٹک نامی میگزین میں ایک مضمون شائع کیا.
00:39
And the article was called "As We May Think."
اور مضمون "جیسا کہ ہم سوچ سکتے ہیں" کے عنوان سے تھا.
00:42
And what Vannevar Bush was saying
اور جو وانیور بش کہہ رہا تھا کہ
00:45
was the way we use information is broken.
جس طرح سے ہم معلومات استعمال کرتے ہیں وہ بے ربط ہے.
00:47
We don't work in terms of libraries
ہم لائبریریوں کے لحاظ سے کام نہیں کرتے
00:50
and catalog systems and so forth.
اور کیٹلاگ نظام اور اسی طرح.
00:53
The brain works by association.
دماغ تنظیم کے طور سے کام کرتا ہے.
00:55
With one item in its thought, it snaps instantly to the next item.
اپنی سوچ میں ایک جزو کے ساتھ، یہ فوری طور پر اگلے جزو کا تصور کرتا ہے.
00:57
And the way information is structured
اور جس طرح سے معلومات کی تشکیل ہوتی ہے
01:00
is totally incapable of keeping up with this process.
وہ اس عمل کا ساتھ دینے میں مکمل طور پر ناکام ثابت ہوتا ہے.
01:02
And so he suggested a machine,
اور اس لیے اس نے ایک مشین کی تجویز پیش کی،
01:05
and he called it the memex.
اور اس نے اسے memex کا نام دیا.
01:07
And the memex would link information,
اور memex معلومات کو منسلک کرے گی.
01:09
one piece of information to a related piece of information and so forth.
معلومات کا ٹکڑا معلومات کے ایک متعلقہ ٹکڑے سے اور اسی طرح.
01:11
Now this was in 1945.
اب یہ 1945 میں تھا.
01:14
A computer in those days
ان دنوں میں ایک کمپیوٹر
01:16
was something the secret services used to use for code breaking.
خفیہ سروس کوڈ توڑنے کے لئے استعمال کیا کرتی تھی.
01:18
And nobody knew anything about it.
اور کوئی بھی اس کے بارے میں کچھ نہیں جانتا تھا.
01:21
So this was before the computer was invented.
تو یہ کمپیوٹر کی ایجاد سے پہلے کا تھا.
01:23
And he proposed this machine called the memex.
اور اسنے اس مشین کی تجویز پیش کی جسے memex کہا جاتا ہے.
01:25
And he had a platform where you linked information to other information,
اور اسکے پاس ایک پلیٹ فارم تھا جہاں آپ معلومات دوسرے معلومات سے منسلک کرتے
01:27
and then you could call it up at will.
اور پھر آپ اسے حاصل کر سکتے تھے.
01:30
So spinning forward,
تو آگے بڑھتے ہوئے،
01:32
one of the guys who read this article was a guy called Doug Engelbart,
ان لوگوں میں سے ایک جس نے اس مضمون کو پڑھا وہ ڈوگ اینگل بارٹ تھا،
01:34
and he was a U.S. Air Force officer.
اور وہ امریکی ایئر فورس کا افسر تھا.
01:36
And he was reading it in their library in the Far East.
اور وہ اسے انکی مشرق بعید کی لائبریری میں پڑھ رہا تھا.
01:38
And he was so inspired by this article,
اور اسکی اس مضمون سے کافی حوصلہ افزائی ہوئی،
01:41
it kind of directed the rest of his life.
یہ ایک طرح سے اسکی باقی زندگی کی سمت متعین کرگئی.
01:43
And by the mid-60s, he was able to put this into action
اور 60 کی دہائی کے وسط تک، وہ اس قابل تھا کہ اسے کارگر کرے
01:45
when he worked at the Stanford Research Lab in California.
جب اسنے کیلی فورنیا کے سٹینفورڈ ریسرچ لیب میں کام کیا تھا.
01:48
He built a system.
اس نے ایک نظام بنایا.
01:52
The system was designed to augment human intelligence, it was called.
اسکے بارے میں کہا گیا کہ، یہ نظام انسانی انٹیلی جنس کو بڑھانے کے لئے ڈیزائن کیا گیا تھا.
01:54
And in a premonition of today's world
اور آج کی بدلتی دنیا جیسے
01:57
of cloud computing and softwares of service,
کلاؤڈ کمپیوٹنگ اور سافٹ ویئر سروس میں،
02:00
his system was called NLS
اس کا نظام NLS کہلایا تھا
02:02
for oN-Line System.
آن لائن نظام کے لئے.
02:04
And this is Doug Engelbart.
اور یہ ڈوگ اینگل بارٹ ہے.
02:06
He was giving a presentation at the Fall Joint Computer Conference
وہ موسم خزاں میں مشترکہ کمپیوٹر کانفرنس میں ایک پریزنٹیشن دے رہا تھا
02:08
in 1968.
1968 میں.
02:11
What he showed --
جو اس نے دکھایا --
02:14
he sat on a stage like this, and he demonstrated this system.
وہ اسی طرح ایک سٹیج پر بیٹھا تھا، اور اس نے اس نظام کا مظاہرہ کیا.
02:16
He had his head mic like I've got.
اس کے سر پر مائک تھا جیسا کہ میرے پاس ہے.
02:19
And he works this system.
اور وہ اس نظام پر کام کرتا ہے.
02:21
And you can see, he's working between documents
اور آپ دیکھ سکتے ہیں، وہ (کمپیوٹر) دستاویزات کے درمیان کام کر رہا ہے
02:23
and graphics and so forth.
اور گرافکس اور اسی طرح.
02:25
And he's driving it all
اور وہ یہ سب چلا رہا ہے
02:27
with this platform here,
یہاں اس پلیٹ فارم کے ساتھ،
02:29
with a five-finger keyboard
ایک پانچ بٹن کے بورڈ کے ساتھ
02:31
and the world's first computer mouse,
اور دنیا کا پہلا کمپیوٹر ماؤس،
02:33
which he specially designed in order to do this system.
جو اس نے خاص طور پر ڈیزائن کیا تاکہ اس نظام کو چلایا جاسکے.
02:35
So this is where the mouse came from as well.
تو یہ ہے جہاں سے ماؤس بھی ساتھ ہی آیا تھا.
02:37
So this is Doug Engelbart.
تو یہ ڈوگ اینگل بارٹ ہے.
02:39
The trouble with Doug Engelbart's system
ڈوگ اینگل بارٹ کے نظام کے ساتھ مسئلہ
02:41
was that the computers in those days cost several million pounds.
یہ تھا کہ ان دنوں کمپیوٹرز کی لاگت کئی ملین پونڈ تھی.
02:43
So for a personal computer,
لہذا، ایک ذاتی کمپیوٹر کے لئے
02:46
a few million pounds was like having a personal jet plane;
چند ملین پاؤنڈ، ایک ذاتی جیٹ ہوائی جہاز کی طرح سے تھا،
02:48
it wasn't really very practical.
یہ واقعی بہت عملی نہیں ہے.
02:50
But spin on to the 80s
80 کی طرف چلتے ہیں
02:52
when personal computers did arrive,
جب پرسنل کمپیوٹرز آئے،
02:54
then there was room for this kind of system on personal computers.
تو پھر پرسنل کمپیوٹرز پر اس قسم کے نظام کے لئے گنجائش تھی.
02:56
And my company, OWL
اور میری کمپنی، OWL نے
02:58
built a system called Guide for the Apple Macintosh.
ایپل میکنٹوش کے لئے گائیڈ، کے نام سےایک نظام بنایا.
03:00
And we delivered the world's first hypertext system.
اور ہم نے دنیا کا پہلا ہایپر ٹیکسٹ نظام فراہم کیا.
03:03
And this began to get a head of steam.
اور یہ مقابلے میں آگے نکلنے لگا
03:07
Apple introduced a thing called HyperCard,
ایپل نے HyperCard نامی ایک چیز متعارف کرائی،
03:09
and they made a bit of a fuss about it.
اور انہوں نے اسے تھوڑا سا الجھا دیا.
03:11
They had a 12-page supplement in the Wall Street Journal the day it launched.
انہوں نے اس کے آغاز کے دن وال سٹریٹ جرنل میں ایک 12 صفحے کا ضمیمہ شائع کیا تھا.
03:13
The magazines started to cover it.
رسالوں نے اسے کور کرنا شروع کر دیا.
03:16
Byte magazine and Communications at the ACM
بائٹ میگزین اور ACM کے کموینیکیشن میگزین
03:18
had special issues covering hypertext.
نے hpertext سے متعلق خصوصی طور پر لکھا.
03:20
We developed a PC version of this product
ہم نے اس کا ایک PC ورژن تیار کیا
03:22
as well as the Macintosh version.
ساتھ ساتھ Macintosh ورژن بھی.
03:24
And our PC version became quite mature.
اور ہمارا PC ورژن کافی مکمل طور پر بن گیا تھا.
03:26
These are some examples of this system in action in the late 80s.
یہ 80s کے اواخر میں اس نظام کی کارروائی کی کچھ مثالیں ہیں.
03:29
You were able to deliver documents, were able to do it over networks.
آپ دستاویزات فراہم کرنے کے قابل تھے، اسے نیٹ ورک پر کرنے کے قابل تھے.
03:33
We developed a system such
ہم نے ایک ایسا نظام تیار کیا
03:36
that it had a markup language based on html.
کہ یہ HTML مارک اپ (کمپیوٹر) زبان کی بنیاد پر تھا.
03:38
We called it hml: hypertext markup language.
ہم نے اسے hml کہا : ہایپر ٹیکسٹ مارک اپ کی زبان.
03:40
And the system was capable of doing
اور یہ نظام دستاویزات کے نظام کو
03:43
very, very large documentation systems over computer networks.
بہت، بہت بڑے کمپیوٹر نیٹ ورکس پر کرنے کے قابل تھا.
03:45
So I took this system to a trade show in Versailles near Paris
تو میں پیرس کے قریب Versailles کے ایک تجارتی شو میں اس نظام کو لے گیا
03:49
in late November 1990.
نومبر 1990ء کے اواخر میں.
03:52
And I was approached by a nice young man called Tim Berners-Lee
اور مجھ سے ٹم برنرز- لی نامی ایک اچھے نوجوان آدمی کی طرف سے رابطہ کیا گیا
03:55
who said, "Are you Ian Ritchie?" and I said, "Yeah."
جس نے کہا، "کیا آپ ایان رچی ہیں؟" اور میں نے کہا، "ہاں."
03:57
And he said, "I need to talk to you."
اور اس نے کہا، "میں آپ سے بات کرنا چاہتا ہوں."
03:59
And he told me about his proposed system called the World Wide Web.
اور اس نے مجھے اپنے مجوزہ نظام جسے ورلڈ وائڈ ویب کہا جاتا ہے کے بارے میں بتایا.
04:01
And I thought, well, that's got a pretentious name,
اور میں نے سوچا، اچھی طرح، کہ ایک دکھاوٹی نام ہے،
04:04
especially since the whole system ran on his computer in his office.
خاص کر جب سارا نظام اس کے دفتر میں اس کے کمپیوٹر پر چل رہا تھا.
04:07
But he was completely convinced that his World Wide Web
لیکن اسے پوری طرح سے یقین تھا کہ اس کا ورلڈ وائڈ ویب
04:10
would take over the world one day.
ایک دن دنیا پر چھا جائے گا.
04:13
And he tried to persuade me to write the browser for it,
اور اسنے مجھے اس کے واسطے براؤزر لکھنے کے لئے قائل کرنے کی کوشش کی،
04:15
because his system didn't have any graphics or fonts or layout or anything;
کیونکہ اسکے نظام میں کوئی بھی گرافکس یا شبیہیں یا ترتیب کچھ بھی نہیں تھا؛
04:17
it was just plain text.
یہ صرف سادہ متن تھا.
04:20
I thought, well, you know, interesting,
میں نے سوچا، اچھا ، آپ جانتے ہیں، دلچسپ،
04:22
but a guy from CERN, he's not going to do this.
لیکن CERN سے ایک لڑکا، وہ ایسا نہیں کرسکتا.
04:25
So we didn't do it.
تو ہم نے اسے نہیں کیا.
04:27
In the next couple of years,
اگلے چند سالوں میں،
04:29
the hypertext community didn't recognize him either.
ہایپر ٹیکسٹ کمیونٹی نے بھی اس کو تسلیم نہیں کیا.
04:31
In 1992, his paper was rejected for the Hypertext Conference.
1992 میں، اس کا مقالہ ہایپر ٹیکسٹ کانفرنس کے لئے مسترد کر دیا گیا تھا.
04:33
In 1993,
1993 میں،
04:36
there was a table at the conference in Seattle,
سیٹل میں کانفرنس کے دوران ایک میز پر،
04:39
and a guy called Marc Andreessen
اور Mark Andreessen نامی ایک لڑکا
04:41
was demonstrating his little browser for the World Wide Web.
ورلڈ وائڈ ویب کے لئے اپنے چھوٹے سے براؤزر مظاہرہ کر رہا تھا.
04:43
And I saw it, and I thought, yep, that's it.
اور میں نے اسے دیکھا، اور میں نے سوچا کہ، جی ہاں، بس یہی ہے.
04:46
And the very next year, in 1994, we had the conference here in Edinburgh,
اور اگلے ہی سال، 1994ء میں، یہاں ایڈنبرا میں کانفرنس تھی.
04:48
and I had no opposition in having Tim Berners-Lee as the keynote speaker.
اور مجھے ٹم برنرز- لی کو کلیدی اسپیکر کے طور پر لینے میں کوئی اختلاف نہیں تھا.
04:51
So that puts me in pretty illustrious company.
تو یہ مجھے کافی شاندار کمپنی میں رکھتا ہے.
04:55
There was a guy called Dick Rowe
ایک Dick Rowe نامی لڑکا تھا
04:57
who was at Decca Records and turned down The Beatles.
جس نے Decca ریکارڈز میں تھا اور بیٹلز کو انکار کر دیا تھا.
04:59
There was a guy called Gary Kildall
ایک Gary Kildall نامی لڑکا تھا
05:01
who went flying his plane
جو اپنا ہوائی جہاز اڑانے چلا گیا
05:03
when IBM came looking for an operating system
جب IBM ایک آپریٹنگ سسٹم کی تلاش میں آیا
05:05
for the IBM PC,
اپنے IBM PC کے لئے،
05:07
and he wasn't there, so they went back to see Bill Gates.
اور وہ وہاں نہیں تھا، تو وہ واپس چلے گئے گئے، بل گیٹس کو دیکھنے کے لئے.
05:09
And the 12 publishers
اور 12 پبلشرز
05:11
who turned down J.K. Rowling's Harry Potter, I guess.
جنہوں نے J.K. Rowling کے ہیری پوٹر کو ٹھکرا دیا تھا، مجھے لگتا ہے.
05:13
On the other hand, there's Marc Andreessen
دوسری طرف، Mark Andreessen
05:16
who wrote the world's first browser for the World Wide Web.
جس نے دنیا میں ورلڈ وائڈ ویب کے لئے سب سے پہلا براؤزر لکھا.
05:18
And according to Fortune magazine,
اور فارچون میگزین کے مطابق،
05:20
he's worth 700 million dollars.
اس کی مالیت 700 ملین ڈالر ہے.
05:22
But is he happy?
لیکن کیا وہ خوش ہے؟
05:24
(Laughter)
(ہنسی)
05:26
(Applause)
(تالیاں)
05:28
Translated by Shahiryar Khan
Reviewed by Shadia Ramsahye

▲Back to top

About the speaker:

Ian Ritchie - Software entrepreneur
Ian Ritchie

Why you should listen

Ian Ritchie is chair of iomart plc. and several other computer and learning businesses, including Computer Application Services Ltd., the Interactive Design Institute and Caspian Learning Ltd. He is co-chair of the Scottish Science Advisory Council, a board member of the Edinburgh International Science Festival and the chair of Our Dynamic Earth, the Edinburgh Science Centre.

Ritchie founded and managed Office Workstations Limited (OWL) in Edinburgh in 1984 and its subsidiary OWL International Inc. in Seattle from 1985. OWL became the first and largest supplier of Hypertext/Hypermedia authoring tools (a forerunner to the World Wide Web) for personal computers based on its Guide product. OWL's customers used its systems to implement large interactive multimedia documentation systems in industry sectors such as automobile, defence, publishing, finance, and education. OWL was sold to Matsushita Electrical Industrial (Panasonic) of Japan in December 1989. He is the author of New Media Publishing: Opportunities from the digital revolution (1996).

He was awarded a CBE in the 2003 New Years Honours list for services to enterprise and education; he is a Fellow of the Royal Academy of Engineering; a Fellow of the Royal Society of Edinburgh; and a Fellow and a past-President of the British Computer Society (1998-99). 

More profile about the speaker
Ian Ritchie | Speaker | TED.com